128

آڈٹ رپورٹ میں قومی خزانے کو اربوں روپے نقصان کا انکشاف

آڈٹ رپورٹ میں قومی خزانے کو اربوں روپے نقصان کا انکشاف
چیف آفیسر ایم سی آئی و دیگر افسر خزانے کو نقصان پہنچانے کے ذمہ دار قرار
اسلام آباد (صباح نےوز) ڈائریکٹوریٹ آف میونسپل ایڈمنسٹریشن کے اسپیشل آڈٹ میں قومی خزانے کو اربوں روپے نقصان کا انکشاف ہو گیا۔ چیف آفیسر ایم سی آئی علی اصفر اور دیگر افسر خزانے کو اربوں روپے نقصان پہنچانے کے ذمہ دار قرار پائے۔ سپیشل آڈٹ میں سینٹورس مال، دامن کوہ، شکرپڑیاں، جی نائن اڈا کے ٹھیکوں میں بڑے پیمانے پر بے ضابطگیاں ہوئیں۔ چیف آفیسر ایم سی آئی علی اصفر اور دیگر افسران خزانے کو اربوں روپے نقصان پہنچانے کے ذمہ دار قرار دیا گیا۔ آڈٹ رپورٹ کے مطابق کنٹریکٹرز کو خلاف ضابطہ 85 کروڑ روپے سے زائد فائدہ پہنچایا گیا۔ لیاقت علی خان اینڈ کو سے ایف نائن پارک میں واقع میگازون بالنگ کلب سے 14 کروڑ 64 لاکھ روپے وصول نہیں کئے گئے۔ سینٹورس مال، دامن کوہ، شکرپڑیاں، جی نائن اڈا اور ڈپلومیٹک شٹل سروس کے ٹھیکوں میں قومی خزانے کو بھاری نقصان ہوا۔ ڈی ایم اے کی جانب سے وصولیاں کرنے کیلئے کوئی سنجیدہ کوشش کی گئی اور نہ ہی کنٹریکٹر کے خلاف کوئی ایکشن لیا۔النورشٹل سروس نے 10فیصد سکیورٹی ڈیپازٹ اور 10 فیصد ودہولڈنگ ٹیکس جمع نہیں کرایا۔ جی نائن بس اسٹینڈ پر 19 دکانیں/سٹالز جبکہ سینٹورس مال پر 2 سٹالز خلاف ضابطہ الاٹ کئے گئے۔ ڈی ایم اے انتظامیہ نے عباسین اوریز سے 17 کروڑ روپے وصول نہیں کئے ۔ عباسین اوریز کو دامن کوہ پارکنگ کا بھی ٹھیکہ دیا گیا، سکیورٹی ڈیپازٹ اور ودہولڈنگ ٹیکس کی مد میں 12لاکھ روپے وصول نہیں کئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں