مرغی دھونے سے فوڈ پوائزننگ کا خطرہ: رپورٹ

chicken

لندن (یوا ین پی)کچی مرغی دھوتے ہوئے آلودہ پانی کی اڑنے والی چھینٹوں سے ہاتھ، کپڑے اور کھانا پکانے کے برتنوں سمیت کام کی جگہ پرکیمپی لوبیکٹریا پھیل سکتا ہے برطانیہ میں خوراک کے معیار پرنظر رکھنے والی حکومتی تنظیم نے صارفین کو خبردار کیا ہے کہ تازہ مرغی کے گوشت کو دھونا بند کر دیں، کیونکہ دھلی ہوئی مرغی سے فوڈپوائزننگ کا خطرہ پیدا ہوتا ہے۔فوڈ اسٹینڈرڈ ایجنسی نے لوگوں کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ زیادہ تر لوگوں کو اس بات کا اندازہ نہیں ہے کہ کچی مرغی کا گوشت دھونے سے صحت کو نقصان پہنچانے والے جرثومے یا زہریلے مادے پھیلتے ہیں، جن سے فوڈ پوائزنگ ہوسکتی ہے۔’گارڈین‘ میں شائع ہونے والی ایک حالیہ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ برطانیہ میں ہرسال ۰۸۲,۰۰۰ افراد فوڈ پوائزنگ کا شکار ہوتے ہیں اور ’رکیمپی لوبیکٹریا’ سے پھیلنے والی فوڈ پوائزنگ برطانیہ بھر میں سب سے زیادہ عام ہے،جبکہ صرف ایک تہائی افراد اس بات سے آگاہ تھے کہ آلودہ پولٹری بیکٹریا کا ایک اہم ترین ذریعہ ہے۔تنظیم کی جانب سے واضح کیا گیا ہے کہ کچی مرغی دھوتے ہوئے آلودہ پانی کی اڑنے والی چھینٹوں سے ہاتھ، کپڑے اور کھانا پکانے کے برتنوں سمیت کام کی جگہ پر’کیمپی لوبیکٹریا پھیل سکتا ہے۔ماہرین کا کہنا ہے کہ لوگوں کے نزدیک مرغی دھونے کا سب سے اہم مقصد گندگی، دھول مٹی اورجراثیم سے پاک کرنا ہوتا ہے، یا پھر لوگ مرغی پکانے سے پہلے اس لیے دھوتے ہیں کیونکہ انھوں نے لوگوں کو ایسا ہی کرتے دیکھا ہے۔ایف ایس اے سے وابستہ کیتھرین براؤن نے کہا ہے کہ مرغی دھونا اس لحاظ سے بھی غیر ضروری ہے کیونکہ، جتنا زیادہ مرغی پکائی جائے گی، جراثیم خود بخود مرتے جائیں گے۔ایف ایس اے کی آن لائن جائزہ رپورٹ میں حصہ لینے والے ۷,۰۰۰برطانوی شہریوں میں سے۴۴ فیصد نے بتایا کہ وہ مرغی پکانے سے پہلے اسے اچھی طرح سے دھوتے ہیں۔
Scroll To Top