MDA

MDA

 میں تارکین وطن کی قیمتی جائیدادوں کی جعلی منتقلی کے دھندے کا انکشاف
ایم ڈی اے حکام کی جعلی منتقلی کی تصدیق، جعل سازوں کے منظم گروہ نے کمال ہوشیاری سے پاکستان ایمبیسی بریڈفورڈUK، فارن آفس اسلام آباد اور سب رجسٹرار میرپو رکے ذمہ داران کو بھی ”ماموں “بنا دیا
معاملہ افشاءہونے پر DGنے یوٹرن لیتے ہوئے ڈائریکٹر اسٹیٹ چوہدری امجد اور ڈائریکٹر ایڈمن مرزا ارشد کی سربراہی میں دو رکنی انکوائری کمیٹی قائم کرکے 3دن میں رپورٹ کرنے کا تحریری حکم جاری
ادارہ ترقیات میرپور کی ون ونڈو سمیت شعبہ ٹاﺅن پلاننگ و شعبہ اسٹیٹ میں بھی قبضہ و پلاٹ مافیاکے بعض کارندے موجود ہیں جو چمک کے کمال سے کوئی بھی ناجائزکام کرنے سے نہیں کتراتے
ون ونڈو میں تعینات طارق نامی کلرک بادشاہ نے بدوں منظوری مجاز اتھارٹی نے از خود سپریم کورٹ کے فیصلے کے منافی توہین عدالت کا مرتکب ہوتے ہوئے بینک چالان بنا کر رقم ادارہ کے اکونٹ میں جمع کروا دی
جعلی منتقلی مافیا میں بھی گھلبلی مچ گئی، ذمہ داران نے یوٹرن لیتے ہوئے جعلی منتقلی کو منسوخ کرکے جعل سازوں کے خلاف FIRکے اندراج کےلئے SSP

میرپور کو باضابطہ تحریک کردی،روزنامہ عدالت کی تحقیقاتی رپورٹ میں اہم انکشافات
میرپور (ظفرمغل سے )آزاد کشمیر میں کڑے احتساب کے نام پر قائم ہونے والی پی ٹی آئی کی پہلی حکومت کے آغاز میں ہی صدرریاست بیرسٹرسلطان کے حلقہ انتخاب میرپور کے ادارہ ترقیات (MDA)میں براجمان ن لیگی DGانورغازی کے دور میں کشمیری تارکین وطن کی کروڑوں روپے کی جائیدادوں کی مبینہ طور پر ”چمک کے کمال “سے جعلی منتقلی کے دھندے کا انکشاف ،ایم ڈی اے حکام کی بھی جعلی منتقلی کی تصدیق جعل سازوں کے منظم گروہ کے ارکان نے کمال ہوشیاری سے پاکستان ایمبیسی بریڈفورڈUK، فارن آفس اسلام آباد اور سب رجسٹرار میرپو رکے ذمہ داران کو بھی ”ماموں “بنا دیا ۔راز افشاءہونے اوربرطانیہ میں مقیم دوہری شہریت کے حامل میرپور شہر کے رہائشی ،منتقل ہونے والی جائیداد کے اصل مالک کے علم ہونے پر ادارہ ترقیات میرپور کے ذمہ داران نے یوٹرن لیتے ہوئے جعلی منتقلی کو منسوخ کرکے جعل سازوں کے خلاف FIRکے اندراج کےلئے SSPمیرپور کو باضابطہ تحریک کردی ۔تفصیلات کے مطابق عدالت میڈیا گروپ کو اپنے ذرائع سے معلوم ہوا کہ آزاد کشمیر میںاحتساب کے بنیادی منشور کی بنیاد پر قائم ہونے والی پی ٹی آئی کی پہلی حکومت کے آغاز میں بھی ادارہ ترقیات میرپور میں جاری کرپشن کا دھندہ ادارہ میں قائم کرپٹ مافیا کی ملی بھگت سے تاہنوز جاری ہے جس پر”روزنامہ عدالت “کی تحقیقات کے بعد یہ بات منظرعام پر آئی کہ ادارہ ترقیات میرپور کی ون ونڈو سمیت شعبہ ٹاﺅن پلاننگ و شعبہ اسٹیٹ میں بھی قبضہ و پلاٹ مافیاکے بعض کارندے موجود ہیں جو چمک کے کمال سے کوئی بھی ناجائزکام کرنے سے نہیں کتراتے اور وہ اپنے ذاتی مفاد کےلئے فائلوں اورنقشوں میں ردوبدل اور پلاٹوں کی جعلی منتقلی سمیت ایک ایک پلاٹ کی کئی کئی فائلیں بنانے میں بھی مہارت رکھتے ہیں ۔اور ادارہ میں براجمان ن لیگی دور میں تعینات ہونے والے DGانورغازی کو بھی مافیا نے ماموں بنا رکھا ہے اور گزشتہ دنوں پلاٹوں کی دو فائلیں بلدیہ ریکارڈ میں موجود ہونے کے باوجود ون ونڈو میں تعینات طارق نامی ایک کلرک بادشاہ نے بدوں منظوری مجاز اتھارٹی نے از خود سپریم کورٹ کے فیصلے کے منافی توہین عدالت کا مرتکب ہوتے ہوئے ناصرف بینک چالان بنا کر رقم بینک میں ادارہ کے اکونٹ میں جمع کروا دی اور DGانورغازی کو بھی بغیر فائل کے سادہ کاغذ پر محض ٹاﺅن پلانر کو رام کرتے ہوئے اُس کی رپورٹ پر DGانور غازی کو بھی ”ماموں “بنا کر ”منظوری دی جاتی ہے “لکھواکر دستخط ثبت کروالیے جس پر معاملہ افشاءہونے پر DGنے یوٹرن لیتے ہوئے ڈائریکٹر اسٹیٹ چوہدری امجد اور ڈائریکٹر ایڈمن مرزا ارشد کی سربراہی میں دو رکنی انکوائری کمیٹی قائم کرکے 3دن میں رپورٹ کرنے کا تحریری حکم جاری کرکے اپنے آپ کو بری الذمہ قرار دینے اور اپنے بچاﺅ کےلئے حفاظتی راہ اختیار کرلی ۔روزنامہ عدالت کی تحقیقات کے دوران ایک ہفتہ میں مزید انکشاف ہوا ہے کہ میرپور کے رہائشی جاوید اختر جو کہ برطانیہ میں ویسٹ یارک شائرمیں مقیم ہے کے میرپو رشہر کے سیکٹر جی ون پارٹ ون میں پلاٹن نمبر 155پر تعمیر شدہ مکان جس کی موجودہ مارکیٹ ویلیوتقریباً4کروڑ روپے ہے کو محمد رمضان ولد عبدالعزیز ساکن سیکٹر F-1میرپور حال مقیم 43آشٹن روڈ لیڈز ویسٹ یارک شائربرطانیہ نے کمال ہوشیاری سے جعلی دستاویزات اور کاغذات کی بنیاد پر پاکستان ایمبیسی بریڈفورڈUK، فارن آفس اسلام آباد اور سب رجسٹرار میرپو رکے ذمہ داران کو بھی ”ماموں “بنا تے ہوئے مختار نامے بناکر متذکرہ پلاٹ کی منتقلی کےلئے ادارہ ترقیات میرپور سے 1کروڑ 70لاکھ روپے کی مالیت ظاہر کرتے ہوئے منتقل کروانے میں کامیابی حاصل کرلی روزنامہ عدالت کی تحقیقات کے دوران 16-08-21کو سب رجسٹرار میرپور کی تصدیق کے مطابق مختار نامہ عام عنوانی جاوید اختر وغیرہ بنام محمد رمضان زیر رجسٹری نمبر 360مورخہ 16-07-21کو درست طور پر درج ہونا پایا جاتا ہے اور مورخہ 16-07-21تا16-08-21تک ابطال ہونا نہ پایا جاتا ہے ،مذکورہ پلاٹ کی جعل سازی کے ذریعے منتقلی کا راز افشاءہونے اور اصل مالک تارک وطن کو اطلاع ملنے پر ادارہ ترقیات کے ذمہ داران اور جعلی منتقلی مافیا میں بھی گھلبلی مچ گئی اور ادارہ ترقیات میرپور کے ذمہ داران نے یوٹرن لیتے ہوئے یکم ستمبر 2021کو زیر حکم نمبری ڈی ای ایم 2021/8208-11/کوپلاٹ متذکرہ کی جعلی منتقلی کو تاحکم ثانی معطل کردیا گیا اور پلاٹ کے مختار شرعی ورثاء،نمائندہ خریداراور گواہان کوبغرض سماعت ایم ڈی اے طلب کیا گیا جس پر مبینہ مختار کا عدم دستیابی پر نوٹس وصول نہ ہوا اور حاضر دیگر پلاٹ منتقل کرانے والے معہ کمیشن ایجنٹ کے بیانات قلم بند کرکے تصدیق کروائے گئے جس کے مطابق پلاٹ نمبر 155سیکٹر G-1پارٹ 1بمعہ تعمیر شدہ مکان ایک کروڑ 70لاکھ روپے کے عوض مسمی مہربان خان ولد سائیں محمد کو فروخت کردیا ہواہے اور سالم رقم بھی PWDریسٹ ہاﺅس میرپور میں وصول کرلی گئی ہوئی ہے اور مظہران کو علم نہ ہے کہ مختار نامہ عام جعلی ہے یا مختار عام نے کوئی فراڈ کیا ہے کیونکہ مختار متذکرہ بیرون ملک برطانیہ سے آمدہ ہے اور باقاعدہ فارن آفس اسلام آباد ،سب رجسٹرار صاحب میرپور سے رجسٹرڈ شدہ ہے اسی طرح متذکرہ پلاٹ کی فروخت میں شامل کمیشن ایجنٹ محمد شہزاد ولد بشیر خان کے مطابق اُس کا مذکورکےساتھ بذیل ٹیلی فون رابطہ رہاہے تقریبا 4کروڑ روپے مالیت کے پلاٹ کی جعلی دستاویزات پر منتقلی کے اس معاملہ میں جعل سازی اور فراڈ ثابت ہونے پر ادارہ ترقیات میرپور کے ڈپٹی ڈائریکٹر اسٹیٹ مینجمنٹ مرزا ذوالفقار نے DGایم ڈی اے انور غازی اور ڈائریکٹر اسٹیٹ مینجمنٹ چوہدری امجد کی ہدایت پر SSPمیرپور عرفان سلیم کو مورخہ 08-09-21کو زیر نمبری 2021/8451-54/OWFCکے تحت محمد رمضان ولد عبدالعزیز ساکن سیکٹر F-1میرپور حال مقیم 43آشٹن روڈ لیڈز ویسٹ یارک شائربرطانیہ کےخلاف اس جعل سازی کے ذریعے پاکستان ایمبیسی بریڈفورڈUK، فارن آفس اسلام آباد اور سب رجسٹرار میرپو رکے ذمہ داران کو بھی ماموں بنانے کی بنیاد پر بنائے گئے تمام جعلی کاغذات کے ثبوت فراہم کرتے ہوئے جعل سازی کے مرتکب ملزم مذکورکےخلاف تحت قانون ایف آئی آر درج کرکے انصاف کے تقاضوں کو پورا کیاجائے ۔ادارہ ترقیات میرپور میں جعل سازی کے ذریعے پاکستان ایمبیسی بریڈفورڈUK، فارن آفس اسلام آباد اور سب رجسٹرار میرپو رکے ذمہ داران کو بھی ماموں بنانے کاانتہائی قدم اور کشمیری تارکین وطن سمیت متاثرین منگلا ڈیم و میرپور کے شہریوں کی قیمتی جائیدادوں سے کھلواڑکرنے کا معاملہ احتساب کے نام پر قائم ہونے والی آزاد کشمیر میں قائم ہونے والی پی ٹی آئی کی پہلی حکومت کے صدر ریاست بیرسٹر سلطان محمود اور وزیراعظم آزا دکشمیرسردار عبدالقیوم نیازی سمیت وزیراعظم پاکستان عمران خان کےلئے بھی ایک لمحہ فکریہ ہے روزنامہ عدالت کی تحقیقات کے دوران یہ بھی معلوم ہوا کہ جعلی طور پر منتقل ہونے والی جائیداد کے اصل مالک برطانوی تارک وطن کی طرف سے وزیراعظم پاکستان کے سٹیزن پورٹل پر اپنے پلاٹ کی جعلی منتقلی کے بارہ میں شکایت بھی درج کر وا ئی جسے وزیراعظم پاکستان کے پورٹل سے ڈپٹی کمشنر میرپور بدر منیر کو اسکی انکوائری کیلئے ہدایات دی گئیں جنہوں نے مذکورہ پلاٹ کی جعلی منتقلی کا معاملہ ادارہ ترقیات میرپور کے ڈی جی انور غازی کو ریفر کرتے ہوئے کی گئی کارروائی سے وزیراعظم پاکستان کو بھی بذریعہ سٹیزن پورٹل آگاہ کرنے کی ہدایت کی ۔

Scroll To Top