،کشمیریوں کو جعلی مقابلوں میں شہید کیا جا رہا ہے، سردارمسعود خان

اسلام آباد(بیورورپورٹ) آزاد جموں وکشمیر کے صدر سردار مسعود خان نے دنیا بھر خاص طور پر برطانیہ میں زیر تعلیم طلبہ پر زور دیا ہے کہ وہ تنازعہ کشمیر کے حوالے سے عوامی رائے عامہ تیار کرنے اور مقبوضہ جموں وکشمیر میں بھارت کے ناجائز اور غاصبانہ قبضہ کے بارے میں عالمی سطح پر شعور اجاگر کرنے کیلئے اپنی کوششیں تیز تر کریں۔ یہ بات انہوں نے برطانیہ میں قائم پاکستان لیڈر شپ ایسوسی ایشن آف سٹوڈنٹس اینڈ ایلومنائی (پلاسا) کے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کہی۔ وفد جس کی قیادت طالب علم رہنما عدیل احمد کر رہے تھے نے جموں وکشمیر ہاؤس میں صدر آزادکشمیر سے ملاقات کی اور اُن سے اپنی تنظیم کی سرگرمیوں اور مقبوضہ جموں وکشمیر کی تازہ ترین صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔ اپنی گفتگو میں صدر سردار مسعود خان نے کہا کہ بھارت مقبوضہ جموں وکشمیر میں اپنے غیر قانونی قبضہ کو دوام بخشنے اور کشمیریوں پر ہونے والے انسانیت سوز مظالم پر آواز بلند کرنے والے نوجوانوں کو خاص طور پر نشانہ بنا رہا ہے، انہیں جعلی مقابلوں میں شہید کیا جا رہا ہے، پیلٹ گنوں کے استعمال سے انہیں بصارت سے محروم کر رہا ہے اور بڑی تعداد میں نوجوانوں کو گرفتار کر کے انہیں جیلوں اور ملٹر عقوبت خانوں میں تشدد کا نشانہ بنا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی قابض فوج یہ سب کچھ اس لئے کر رہی ہے تاکہ آزادی اور حق خودارادیت کے لئے اٹھنے والی آوازوں کو خاموش کیا جا سکے۔ صدر آزادکشمیر نے کہا کہ بھارت کے تمام تر مظالم کے باوجود مقبوضہ کشمیرکے نوجوان بھارت کے آگے جھکنے کے لئے تیار نہیں اور اُن کا یہ عزم ہے کہ وہ اپنا جمہوری اور جائز حق، حق خودارادیت لے کر رہیں گے اور اس جدوجہد میں کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت مقبوضہ کشمیر کی تحریک آزادی میں نوجوان ہی ہراول دستہ کا کردار ادا کررہے ہیں۔ برطانیہ کی کوین میری یونیورسٹی، کنک کالج اور سٹی یونیورسٹی لندن سمیت دیگر تعلیمی اداروں میں پلاسا کی سرگرمیوں کی تعریف کرتے ہوئے صدر سردار مسعود خان نے طلبہ پر زور دیا کہ وہ آئندہ آنے والے تین چار عشروں کے حالات اور قومی ضروریات کو سامنے رکھ کر اپنی تعلیم پر توجہ دیں اور اپنے آپ کو جدید علوم، سائنس و ٹیکنالوجی، کاروباری مہارتوں اور حکومت اور گورننس سے متعلق علوم سے آراستہ کر کے پاکستان کو دنیا کا ایک مضبوط اور مستحکم ملک بنانے میں اپنا کردار ادا کریں۔ انہوں نے کہا کہ ایک مضبوط اور مستحکم پاکستان کے بغیر مقبوضہ کشمیر کی آزادی ممکن ہے اور نہ ہی بھارت کے مسلمان محفوظ ہیں۔ اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے وفد کے قائد عدیل احمد نے صدر سردار مسعود خان کا برطانوی جامعات اور کالجز تک پہنچنے کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ اُن کی خواہش ہے کہ صدر برطانیہ بھر میں پھیلی ہوئی جامعات کے طلبہ تک پہنچ کر انہیں مقبوضہ کشمیر کی صورتحال اور قومی ذمہ داریوں سے آگاہ کریں اور اس مقصد کے لئے پہلے سے کام کرنے والی تنظیموں کی حوصلہ افزائی کریں۔ طلبہ کے وفد نے آزادکشمیر کے سرکاری شعبہ میں قائم جامعات کے وائس چانسلر ز حضرات سے ملنے کی خواہش کا اظہار بھی کیا۔
Scroll To Top