شام‘ دولتِ اسلامیہ کے خلاف لڑائی میں 14 ترک فوجی ہلاک، 33 زخمی، 138 جنگجو مارے گئے

img

انقرہ(یو این پی)ترکی میں فوج کا کہنا ہے کہ شام میں دولتِ اسلامیہ سے لڑتے ہوئے ترکی کے 14 فوجی ہلاک ہوگئے ہیں۔یہ ہلاکتیں الباب کے قصبے میں ہوئیں، جسے ترک فوج دولتِ اسلامیہ کے قبضے سے چھڑانے میں بشارالاسد مخالف باغیوں کی مدد کر رہی ہے۔اطلاعات کے مطابق ان جھڑپوں میں 33 فوجی زخمی بھی ہوئے ہیں۔شامی آپریشن کے آغاز سے کسی ایک دن میں ترک فوجیوں کی ہلاکتوں کی یہ سب سے بڑی تعداد ہے۔ ترکی نے شام میں اپنا فوجی آپریشن اس سال اگست میں شروع کیا تھا۔ترکی کی فوج کا کہنا ہے کہ دولتِ اسلامیہ نے متعدد خودکش بمباروں کا استعمال کیا۔ ان کا دعوی ہے کہ انھوں نے دولتِ اسلامیہ کے 138 جنگجو بھی مارے ہیں تاہم اس کی آزادانہ تصدیق نہیں ہو سکی ہے۔ادھر شام میں اہم محاذ حلب مکمل طور پر حکومتی فوج کے کنٹرول میں آنے کے قریب معلوم ہوتا ہے۔الباب کا قصبہ شام اور ترکی کی سرحد سے تقریبا 20 کلومیٹر دور ہے اور ترک آپریشن کی توجہ اسی مقام پر مرکوز رہی ہے۔بی بی سی کے مطابق ترک فوج نے دولتِ اسلامیہ کو بھاری نقصان پہنچایا ہے اور وہ الباب سے دولتِ اسلامیہ کو نکالنے میں کامیابی کے قریب ہیں۔ان کا مزید کہنا ہے کہ تاہم یہ سوال ابھی باقی ہے کہ ترکی شام کے اندر کس حد تک علاقے میں مداخلت کرنا چاہتا ہے اور کیا ترکی شام میں دولتِ اسلامیہ کے اہم ترین مرکز رقہ کا کنٹرول حاصل کرنے میں شامی حکومت کے ساتھ مل کر کوئی کردار ادا کرے گا یا نہیں۔
Scroll To Top