قتل یا خود کشی،65سالہ محمد نواز سکنہ میانہ کوٹ سرگودھا پنجاب کی درخت سے لٹکی لاش پوٹھہ کسگمہ سے برآمد

qatal

کسگمہ(نمائندہ خصوصی)قتل یا خود کشی،65سالہ محمد نواز سکنہ میانہ کوٹ سرگودھا پنجاب کی درخت سے لٹکی لاش پوٹھہ کسگمہ سے برآمد،محمد نواز تقریبا عرصہ دو سال سے اپنے منہ بولے بیٹے کے پاس مقامی فرد کی رہائش گاہ میں قیام پذیر تھا،ایس ایس پی بھمبر یاسین بیگ ،ڈی ایس پی محمد آمین اور ایس ایچ او تھانہ علی بیک موقع پر پہنچ آئے ،لاش پوسٹ ماڑتم کے کے بعد لواحقین کے حوالے،پنجاب سے دیگر لواحقین کا محمد نواز کی موت کو قتل قرار دیتے ہوئے انصاف کی اپیل ، پولیس نے دفعہ 174کے تحت مقدمے کی تفتیش شروع کر دی،علاقے میں قتل و خودکشی کی خبر سنتے ہی عوام علاقہ کی بڑی تعداد جائے واقع پر پہنچ آئی، محمد نواز کے منہ بولے بیٹے شقلین اور تقریبا13سالہ بیٹی کی شادی کی تقریب بھیتین دن بعد ہونی تھی،تفصیل کے مطابق محمد نواز سکنہ کیانہ کوٹ سرگودھا پنجاب سے کسگمہ اپنے بیوی بچوں کے ساتھ مقامی فرد کے گھر میں رہائش پزیر تھا زراؤ کے مطابق محمد نواز نے دو شادیاں کی ہوئی تھی ایک بیوی پنجاب میں رہائش پذیر ہے جبکہ دوسری اور بچوں کے ساتھ کسگمہ میں ابھی رہائش پذیر تھا ، جہاں پر اس کے منہ بولے بیٹے اور بیٹی کی شادی کی تقریب کو کچھ دن باقی تھے کہ صبح سویرے عوام علاقہ اور سکول کے طالب علموں نے محمد نواز کی لاش درخت کے ساتھ لٹکی دیکھی تو واقع کی پولیس کو اطلاع دی گئی ،ایس ایس پی بھمبر یاسین بیگ ،ڈی ایس پی محمد آمین اور ایس ایچ او تھانہ علی بیک موقع پر پہنچنے کے بعد لاش کو درخت سے نیچے اتارا گیا اور پوسٹ مارٹم کے لئے پنجیڑی سنٹر لے جایا گیا جہاں پر محمد نواز سکنہ پنجاب کے دیکر لواحقین جن میں اس کا حقیقی بیٹا ،پیلی بیوی کا بھائی ناصر عباس و دیگر بھی پہنچ آئے جہاں پر اس کے لواحقین نے معاملے کو خود کشی تسلیم کرنے سے انکار کرتے ہوئے پوسٹ ماٹم کروانے کا کہا ، محمد نواز کے پوسٹ مارٹم کی حتمی رپورٹ کچھ دن پر آنا متوقع جبکہ کسگمہ میں رہائش پذیر اس کے لواحقین جس میں دوسری بیوی اور بچوں نے اپنے بیان میں کہا کہ ہماری کوئی کسی قسم کی تلخ کلامی اپنے والد سے نہیں ہوئی صبح پتہ چلا کہ محمد نواز کی لاش ردخت کے ساتھ لٹکی ہوئی پولیس نے 174دفعہ کے تحت کاروائی کرتے ہوئے حتمی پوسٹ مارٹم ڈاکٹری رپورٹ تک تفتیش کا دائرہ وسیع کر دیا ۔
Scroll To Top