پہلے تشدد پھر معافی،کشمیر کیڈٹ سائنس کالج اسلام گڑھ تشددکا ڈراپ سین،معاملہ بغیر کارروائی کے ختم

teacher

اسلام گڑھ(نامہ نگار) اثر و رسوخ کا جادوںیامنت سماجت کا کرشمہ۔کشمیر کیڈٹ سائنس کالج اسلام گڑھ کے انچارج کے خلاف بغیرکاروائی کے ہی معاملہ رفعہ دفعہ ہو گیا ۔کشمیر کیڈٹ سائنس کالج اسلام گڑھ میں اس سے قبل بھی سٹوڈنٹس پر بے رحمانہ جسمانی تشدد کے واقعات رونماچکے ہیں مگر معاملات کو رفع دفع کیا جاتا رہا ہے۔گزشتہ روز انچارج کشمیر کیڈت سائنس کالج کے تشدد سے فرسٹ ائیر کے طالبعلم کے کان کے پردے پھٹ گئے تھے ۔حالیہ واقعے کے بعد سٹوڈنٹس اور والدین شدید ذہنی قرب میں مبتلا ہیں ،تعلیم اداروں سے سزا کا رواج ختم کرنے کا مطالبہ ۔تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز اسلام گڑھ کے پرائیویٹ تعلیم ادارے کشمیر کیڈٹ سائنس کالج کے انچارج نے فرسٹ ائیر کے طالبعلم حافظ طیب خلیل ولد قاری خلیل احمد پر بے رحمانہ تشدد کیا گیا تھا ۔متاثرہ طالبعلم کے والد قاری خلیل احمد نے صحافیوں کو بتایا کہ ڈی ایچ کیو میرپور کی رپورٹ کے بچے کے کان کے پردے پھٹ گئے ہیں ۔انھوں نے اس واقع کی رپورٹ تھانہ اسلام گڑھ میں درج کروائی ۔قاری خلیل کے مطابق وہ بیٹے پر تشدد کے ذمہ دار کے خلاف کاروائی کرنا چاہتے تھے مگر انچارج کالج نے عزیز اقارب کو معاملہ میں شامل کرلیا ۔عزیز اقارب کے کہنے پر راضی نامہ کر لیا ۔انھوں نے کہا کہ بچے کو اس ادارے میں مزید تعلیم کے لیے نہیں بھیجے گے ۔واضح رہے کشمیر کیڈٹ سائنس کالج اسلام گڑھ میں اس سے قبل بھی سٹوڈنٹس پر بے رحمانہ جسمانی تشدد کے واقعات رونما ہو چکے ہیں ا۔حالیہ واقعہ کے بعد سٹوڈنٹس والدین پریشانی میں مبتلا ہیں۔سٹوڈنٹس کے والدین اور شہریوں نے حکومت وقت سے بچوں پر تشدد کی روک تھام کے لیے فوری اقدامات کا مطالبہ کیا ہے ۔
Scroll To Top